Mobo pfc
Join live Chat,Forums,Picture sharing,Update your status,Shoutbox with millions of people among the globe !

important news For Mobo Users

بزم غزل
Apko Ko Poetry & Ghazal Achi Lagti Hain?
Yes [19]
Rating: 90%
No [2]
Rating: 10%
Total votes: 21
  zeemian

(29th Sep 2018 / 04:16 AM)
بزم ہدایت سے اپنا کیا واسطہ صاحب_
جن کو عشق ہو جائے وہ کبھی سدھرا نہیں کرتے
Attachment:
Click to view image
(53.9 kb.)
Downloads: 65 Time
  zeemian

(29th Sep 2018 / 04:22 AM)
من کی بات سناؤں کس کو
اپنے جیسا پاؤں کس کو!

اندھے رھبر اندھے پیر
رھبر پیر بناؤں کس کو

شیش محل اب گرتے جائیں
شیشہ میں دکھلاؤں کس کو

میں مستی کا میخانہ ہوں
کون ہے مست بناؤں کس کو

واصفؔ کے گھر دیوالی ہے!
آنگن ناچ نچاؤں کس کو

*واصف علی واصف*

انتخابـــــــــ
ذی
  zeemian

(29th Sep 2018 / 04:23 AM)
اب جو بکھرے تو بکھرنے کی *شکایت* کیسی ؟
خشک پتوں کی ہواؤں سے *رفاقت* کیسی ؟

میں نے ہر دور میں بس اس سے *محبت* کی ہے،
جرم سنگین ہے اب اس میں *رعایت* کیسی ؟

اک پتا بھی اگر شاخ سے *جدا* ہوتا ہے،
کیا کہوں دل پے گزرتی ہے *قیامت* کیسی ؟

زندگی تجھ کو تو لمحوں کا *سفر* کہتے تھے،
راہ میں آ گئی صدیوں کی *مسافت* کیسی ؟

ہوا کے دوش پے رکھے ہوے *چراغ* تھے ہم
جو بجھ گئے تو ہوائوں سے *شکایت* کیسی؟
  zeemian

(29th Sep 2018 / 04:23 AM)
علاوہ میرے ہر اک شخص نور نکلے گا
میں جانتا ہوں مرا ہی قصور نکلے گا

یہ خوب ہم سے زمانے نے ضد لگائی ہے
ہوا نہ میرا جو اس کا ضرور نکلے گا

خبر مجھے تھی یہ رستہ نہیں ہے منزل کا
گمان کب تھا کہ خود سے بھی دور نکلے گا

ہے رہزنوں سے رعایت یہ خاص منصف کی
کہ قافلوں کا ہی لٹ کر قصور نکلے گا

اسی امید پہ اب اور کتنی عمریں جیوں
کہ جینا لازماً اک دن سرور نکلے گا

علاج ڈھونڈا تو ڈھونڈا عجب طبیبوں نے
یہ جان نکلے تو دل کا فتور نکلے گا

ہزار بدلو مگر آئینوں کے بس میں نہیں
یہ عکس میرا یونہی چُور چُور نکلے گا

نشہ ہے عارضی ابرک یہ چاہے جانے کا
تمہارے دل سے بھی جلدی غرور نکلے گا
  zeemian

(29th Sep 2018 / 04:24 AM)
مجھے ایسا لطف عطا کیا...... جو ہجر تھا نہ وصال تھا
 مرے موسموں کے مزاج داں...... تجھے میرا کتنا خیال تھا

کسی اور چہرے کو دیکھ کر...... تری شکل ذہن میں آگئی
 تیرا نام لے کے ملا اسے...... میرے حافظے کا یہ حال تھا

کبھی موسموں کے سراب میں...... کبھی بام و در کے عذاب میں
 وہاں عمر ہم نے گزار دی...... جہاں سانس لینا مُحال تھا

کبھی تُو نے غور نہیں کیا...... کہ یہ لوگ کیسے اُجڑ گئے؟
 کوئی میر جیسا گرفتہ دل...... تیرے سامنے کی مثال تھا

تیرے بعد کوئی نہیں ملا...... جو یہ حال دیکھ کے پوچھتا
 مجھے کس کی آگ جُھلسا گئی...... میرے دل کو کس کا مَلال تھا

کہیں خون ِدل سے لکھا تو تھا...... تیرے سال ِہجر کا سانحہ
 وہ ادھوری ڈائری کھو گئی...... وہ نجانے کون سا سال تھا
  zeemian

(29th Sep 2018 / 04:25 AM)
حسابِ عمر کا اتنا سا گوشوارا ہے
تمہیں نکال کے دیکھا تو سب خسارا ہے

کسی چراغ میں ہم ہیں کسی کنول میں تم
کہیں جمال ہمارا کہیں تمہارا ہے

وہ کیا وصال کا لمحہ تھا جس کے نشے میں
تمام عمر کی فرقت ہمیں گوارا ہے

ہر اک صدا جو ہمیں بازگشت لگتی ہے
نجانے ہم ہیں دوبارا کہ یہ دوبارا ہے

وہ منکشف مری آنکھوں میں ہو کہ جلوے میں
ہر ایک حُسن کسی حُسن کا اشارا ہے

عجب اصول ہیں اس کاروبارِ دُنیا کے
کسی کا قرض کسی اور نے اُتارا ہے

کہیں پہ ہے کوئی خُوشبو کہ جس کے ہونے کا
تمام عالم ِموجود استعارا ہے

نجانے کب تھا! کہاں تھا مگر یہ لگتا ہے
یہ وقت پہلے بھی ہم نے کبھی گزارا ہے

یہ دو کنارے تو دریا کے ہو گئے ، ہم تم!
مگر وہ کون ہے جو تیسرا کنارا ہے

امجد اسلام امجد
  zeemian

(29th Sep 2018 / 04:25 AM)
زندگی کے میلے میں 
خواہشوں کے ریلے میں 
تم سے کیا کہیں جاناں 
اِس قدر جھمیلے میں
وقت کی روانی ہے 
بخت کی گرانی ہے 
سخت بے زمینی ہے 
سخت لا مکانی ہے
ہجر کے سمندر میں 
تخت اور تختے کی 
ایک ہی کہانی ہے 
تم کو جو سنانی ہے
بات گو ذرا سی ہے 
بات عمر بھر کی ہے
درد کے سمندر میں 
اَن گنت جزیرے ہیں 
بے شمار موتی ہیں 
آنکھ کے دریچے میں
تم نے جو سجایا تھا 
بات اُس دئیے کی ہے 
بات اُس گلے کی ہے
جو لہو کی حلوتوں میں 
چور بن کے آتا ہے 
لفظ کی فصیلوں پہ 
ٹوٹ ٹوٹ جاتا ہے
زندگی سے لمبی ہے 
بات رت جگے کی ہے
راستے میں کیسے ہو 
بات تخلیئے کی ہے 
تخلیئے کی باتوں میں 
گفتگو اضافی ہے
پیار کرنے والوں کو 
بس اِک نگاہ کافی ہے
ہو سکے تو سُن جاؤ 
ایک روز اکیلے میں 
تم سے کیا کہیں جاناں 
اِس قدر جھمیلے میں
________________
امجد اسلام امجد
  Sara@

(29th Sep 2018 / 05:49 AM)
Hmmm
  zeemian

(29th Sep 2018 / 07:00 AM)
شام جب زلف کو لہرا کے چلی آتی ہے
اک اداسی مرے دامن سے لپٹ جاتی ہے

اپنے اندر کے جو سناٹے سے باہر نکلوں
شور میں اور طبیعت مری گھبراتی ہے

مدرسے میں مجھے کچھ اور سبق ملتا ھے
جبکہ دنیا مجھے کچھ اور ہی سمجھاتی ہے

اے مغنی تیری لے میں ہے عجب جادو گری
تیری آواز مرے درد کو ۔ ۔ ۔ ۔ سہلاتی ہے

بے تکلف ہے بہت مجھ سے اداسی تبھی تو
وقت بے وقت مجھے ملنے چلی آتی ہے

ترے پیکر کا سرا کوئی تو ہاتھ آئے مرے
جتنی سلجھا تا ہوں ڈور اتنی الجھ جاتی ھے

شاعری درد کی آغوش میں پلتی ہے کہیں
دل لہو کرتی ہے یہ، خون میں نہلاتی ہے

پیش آتی نہیں دشواری کبھی نجم مجھے
درد کی سیج سر شام ہی سج جاتی ہے

نجم
  zeemian

(29th Sep 2018 / 07:01 AM)
آج تمہاری پسند کا رنگ
جب خود۔۔۔۔۔پہ اوڑھا
تو سارا دن یوں لگا مجھ
کو ۔۔۔۔۔کہ جیسے تم مجھ میں سمٹ
آۓ ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔
آج دن کا احساس کچھ
الگ ہی تھا ..!
آج شاید معمول کے
مطابق تم یاد نہی آۓ ..!
بلکہ بے تحاشہ مجھے
اپنے نہ ہونے کے احساس میں۔۔۔۔۔
گھیرے ہوۓ ہو ..!
ہاں میرے بس میں تھا یہ کالا رنگ اوڑھ لیناء ..!
سو میں نے اوڑھ لیاء ..!
میرے دل پر ہجر کی چادر
ہر سمت سے کھینچا تانی کرتی ہے ..!
مگر اس ہجر کا بھی کیا کہنا ..!
قبول است ..! قبول است ..!
تا دمِ آخر قبول است ....!
  zeemian

(29th Sep 2018 / 07:02 AM)
اَگر یہ جاننا چاہَو!
کَوئی کَیسے بِکَھرتا ہے...؟؟؟
بِکَھر کَر کَیسے جِیتا ہے...؟؟؟
چَمَن میں تُم چَلے جانا!
خِزاں کے سَرد مَوسَم میں!
وَہاں پَتُوں کَو دَیکھو تُم!
یا پِھر اَیک آئینہ لے لَو!
اُسے پَتھر پہ دے مارَو!
اَگر مُشکِل ہَو یہ بھی تَو!
اِک پُھول لے لَینا!
ہَوا کے دَوش پَر رَکھنا!
تَو پِھر تُم جان جاؤ گے!
کَوئی کَیسے بِکَھرتا ہے...؟؟؟
اَگر یہ بھی نہ ہَو تُم سے!
تَو مَیرے پاس آ جانا!
مَیرا دِیدار کَر لَینا!
خَبر یہ ہَو ہی جائے گی!
کَوئی کَیسے بِکَھرتا ہے
  zeemian

(29th Sep 2018 / 07:03 AM)
تم نے سچ بولنے کی جرات کی
یہ بھی توہین ہے عدالت کی

منزلیں راستوں کی دھول ہوئیں
پوچھتے کیا ہو تم مسافت کی

اپنا زادِ سفر بھی چھوڑ گئے
جانے والوں نے کتنی عجلت کی

میں جہاں قتل ہو رہا ہوں وہاں
میرے اجداد نے حکومت کی

پہلے مجھ سے جدا ہوا اور پھر
عکس نے آئینے سے ہجرت کی

میری آنکھوں پہ اس نے ہاتھ رکھا
اور اک خواب کی مہورت کی

اتنا مشکل نہیں تجھے پانا
اک گھڑی چاہئے ہے فرصت کی

ہم نے تو خود سے انتقام لیا
تم نے کیا سوچ کر محبت کی

کون کس کے لیے تباہ ہوا
کیا ضرورت ہے اس وضاحت کی

عشق جس سے نہ ہو سکا ، اس نے
شاعری میں عجب سیاست کی

یاد آئی تو ہوئی شناخت مگر
انتہا ہو گئی ہے غفلت کی

ہم وہاں پہلے رہ چکے ہیں سلیم
تم نے جس دل میں اب سکونت کی
  zeemian

(29th Sep 2018 / 07:03 AM)
ﺑﮩﺖ ﺁﺳﺎﻥ ﮨﮯ ﮐَﮩﻨﺎ،
ﻣُﺤﺒّﺖ ﮨَﻢ ﺑﮭﯽ ﮐَﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ !...
ﻣَﮕﺮ ﻣَﻄﻠَﺐ ﻣُﺤﺒّﺖ ﮐﺎ،
ﺳَﻤﺠﮫ ﻟَﯿﻨﺎ ﻧَﮩﯿﮟ ﺁﺳﺎﻥ،
ﻣُﺤﺒّﺖ ﭘﺎ ﮐﮯ ﮐَﮭﻮ ﺩَﯾﻨﺎ،
ﻣُﺤﺒّﺖ ﮐَﮭﻮ ﮐﮯ ﭘﺎ ﻟَﯿﻨﺎ،
ﯾﮧ ﺍُﻥ ﻟَﻮﮔُﻮﮞ ﮐﮯ ﻗِﺼّﮯ ﮨﯿﮟ،
ﻣُﺤﺒّﺖ ﮐﮯ ﺟَﻮ ﻣُﺠﺮِﻡ ﮨﯿﮟ،
ﺟَﻮ ﻣِﻞ ﺟﺎﻧﮯ ﭘﮧ ﮨَﻨﺴﺘﮯ ﮨﯿﮟ،
ﺑِﭽَﮭﮍ ﺟﺎﻧﮯ ﭘﮧ ﺭَﻭﺗﮯ ﮨﯿﮟ،

!••○○○! ﺳُﻨﻮ !••○○○••!

ﻣُﺤﺒّﺖ ﮐَﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺗَﻮ،
ﺑﮩﺖ ﺧﺎﻣَﻮﺵ ﮨَﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ،
ﺟَﻮ ﻗُﺮﺑَﺖ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺟِﯿﺘﮯ ﮨﯿﮟ،
ﺟَﻮ ﻓُﺮﻗَﺖ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺟِﯿﺘﮯ ﮨﯿﮟ،
ﻧﮧ ﻭﮦ ﻓَﺮﯾﺎﺩ ﮐَﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ،
ﻧﮧ ﻭﮦ ﺍَﺷﮑُﻮﮞ ﮐَﻮ ﭘِﯿﺘﮯ ﮨﯿﮟ،
ﻣُﺤﺒّﺖ ﮐﮯ ﮐِﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻟَﻔﻆ ﮐﺎ،
ﭼَﺮﭼﺎ ﻧَﮩﯿﮟ ﮐَﺮﺗﮯ،
ﻭﮦ ﻣَﺮ ﮐﮯ ﺑﮭﯽ ﺍَﭘﻨﯽ ﭼﺎﮨَﺖ ﮐَﻮ،
ﮐَﺒﮭﯽ ﺭُﺳﻮﺍ ﻧَﮩﯿﮟ ﮐَﺮﺗﮯ،
ﺑﮩﺖ ﺁﺳﺎﻥ ﮨﮯ ﮐَﮩﻨﺎ،
ﻣُﺤﺒّﺖ ﮨَﻢ ﺑﮭﯽ ﮐَﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ......!!!
  zeemian

(29th Sep 2018 / 09:23 AM)
یوں غلط تو نہیں چہروں کا تصور بھی مگر "" ""
لوگ ویسے بھی نہیں جیسے نظر آتے ہیں....!
  Duaa_mirza

(29th Sep 2018 / 10:10 AM)
ﻣﺤﺒﺖ ﺁﺯﻣﺎﺅ ﮔﮯ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟
ﺍﺑﮭﯽ ﺗﻢ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﻧﺎ ! ﮐﮧ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ " ﻣﺤﺒﺖ ﺁﺯﻣﺎﺅ ﮔﮯ "!!!
ﭼﻠﻮ ﺍﺏ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺑﺘﻼ ﺩﻭ، ﮐﮧ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﮐﯿﺴﮯ ﺁﺯﻣﺎﺅ ﮔﮯ؟
ﺳُﻨﻮ ! ﺗﻢ ﻃﻔﻞِ ﺍُﻟﻔﺖ ﮨﻮ ! ﺗﻤﮩﯿﮟ ۔۔۔۔۔۔۔۔ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﯽ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟
ﻣﺤﺒﺖ ﮐِﺲ ﮐﻮ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ،،، ﻣﺤﺒﺖ ﮐﯿﺴﮯ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ؟
ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺑﺲ ﯾﮧ ﭘﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ،،،،، " ﻣﺤﺒﺖ ﻣﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘﯽ،
ﻣﺤﺒﺖ ۔۔۔۔۔۔ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ !
ﻣﺤﺒﺖ ۔۔۔۔۔۔۔ﺳﺎﺗﮫ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﮯ !!
ﻣﺤﺒﺖ ۔۔۔۔۔۔ ﺍﯾﮏ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ !
ﻣﺤﺒﺖ ۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺟﺎﻥ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ !
ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ﺗﻢ ﯾﮧ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﻮ،،،، ﻣﺤﺒﺖ ﺍﯾﮏ ﺩﮬﻮﮐﮧ ﮨﮯ،
ﮨﻮﺱ ﮨﮯ، ﺟﺴﻢ ﮐﯽ ﭼﺎﮦ ﮨﮯ، ﻣﺤﺒﺖ ﻣﺎﺭ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ،،،،
ﻣﺤﺒﺖ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ، ﻣﺤﺒﺖ ﺟﮭﻮﭦ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ،،،،،،
ﺗﻮ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺑﺲ ! ﻣﺤﺒﺖ ۔۔۔۔ ﯾﮧ ﮨﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ؟؟؟
ﺍِﺳﮯ ﺗﻢ ﺁﺯﻣﺎﺅ ﮔﮯ۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟؟
ﯾﮧ ﺳﺐ ﮐﭽﮫ ﺟﺎﻧﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﮭﯽ ۔۔۔۔۔ ﺗﻢ ﺁﺯﻣﺎﺅ ﮔﮯ؟؟
ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺗﻢ ﺁﺯﻣﺎ ﺑﯿﭩﮭﮯ؟؟
ﮐﮩﺎ ﻧﺎ ! ﻃﻔﻞِ ﺍُﻟﻔﺖ ﮨﻮ ! ﺗﻤﮩﯿﮟ ۔۔۔۔۔۔۔۔ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﯽ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟
ﻣﺤﺒﺖ ﯾﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ،،،،، ﯾﮧ ﺟﺲ ﮐﻮ ﺗﻢ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﻮ !
ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺑﺘﻼﺅﮞ ﯾﮧ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟؟ ﮐﺒﮭﯽ " ﺁﺋﯿﻨﮧ " ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﮯ؟؟؟
ﮐﮧ ﺟِﺲ ﮐﺎ ﻋﮑﺲ ﻧﮧ ﮨﻮ،،،،،،،،،
ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﻭﮦ ﮨﺮﻋﮑﺲ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ !!
ﺍﮔﺮ ﺑﺎﺩﻝ ﮨﻮ ﺗﻮ،، ﺑﺎﺩﻝ ! ﺍﮔﺮ ﺳﻮﺭﺝ ﮨﻮ ﺗﻮ ،، ﺳﻮﺭﺝ !
ﺍﮔﺮ ﺳﺎﯾﮧ ﮨﻮ ﺗﻮ،، ﺳﺎﯾﮧ ! ﺍﮔﺮ ﺭﻭﺷﻦ ﮨﻮ ﺗﻮ، ﺭﻭﺷﻦ !!
ﭼﮭﭙﺎﺗﺎ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﮨﺮ ﺣﺎﻝ ﺑﻠﮑﻞ ﺳﭻ ﺑﺘﺎﺗﺎ ﮨﮯ !!
ﺍِﺳﮯ ﮨﻢ ﺟﻮ ﺑﮭﯽ ﺩِﮐﮭﻼﺋﯿﮟ،، ﮨﻤﯿﮟ ﻭﮦ ﮨﯽ ﺩﮐﮭﺎﺗﺎ ﮨﮯ !
" ﻣﺤﺒﺖ ﺁﺋﯿﻨﮯ ﺳﯽ ﮨﮯ " ، ﺑﮩﺖ ﮨﯽ ﺻﺎﻑ ﺍﻭﺭ ﺷﻔﺎﻑ !
ﺍِﺳﮯ ﮨﻢ ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ،،،،،،،
ﯾﮧ ﻭﯾﺴﮯ ﮨﯽ ﺗﻮ ﺩِﮐﮭﺘﯽ ﮨﮯ !!
ﮨﺎﮞ ۔۔۔۔۔۔ ﺑﻠﮑﻞ ﺁﺋﯿﻨﮯ ﺟﯿﺴﯽ !!!
ﯾﮧ ﺗﻮﮌﺍ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﯽ،،،،، ﺍِﺳﮯ ﮨﻢ ﺗﻮﮌ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ !
ﯾﮧ ﻣﺎﺭﺍ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﯽ،، ،، ﺍِﺳﮯ ﮨﻢ ﻣﺎﺭ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ !
ﮨﺎﮞ ﺳﺐ ﮐﭽﮫ ﮨﻢ ﮨﯽ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ، ﺍِﺳﮯ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ،
ﮐﮩﺎ ﻧﺎ ! ﺁﺋﯿﻨﮯ ﺟﯿﺴﯽ !!!
ﮨﻢ ﺍِﺱ ﮐﻮ ﺁﺯﻣﺎﺋﯿﮟ ﮐﯿﺎ؟ ﯾﮧ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﮨﻢ ﮐﻮ ﺁﺯﻣﺎﺗﯽ ﮨﮯ !
ﻣﺤﺒﺖ ﺟﯿﺖ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ، ﻣﮕﺮ ۔۔۔۔۔۔ ﮨﻢ ﮨﺎﺭ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ !!
ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺍﺏ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺑﺘﻼﺅﮞ؟؟؟؟
ﮐﮧ ۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺍِﺱ ﻣﯿﮟ ﺟﯿﺘﻨﺎ ﯾﺎ ﮨﺎﺭﻧﺎ ، ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ !
ﯾﮧ ﺳﺐ ﺫﻭﻕِ ﺍﻧﺎ،،،،، ﺗﺴﮑﯿﻦِ ﺩِﻝ ،،،،، ﻭﻗﺘﯽ ﺗﺴﻠﯽ ﮨﮯ،
ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮐﮯ ﺗﻘﺎﺿﮯ ﮨﯿﮟ، ﯾﮧ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﮐﮯ ﺗﻤﺎﺷﮯ ﮨﯿﮟ !
" ﻣﺤﺒﺖ " ﯾﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﯾﺎﺭﻡ ! " ﻣﺤﺒﺖ " ! ﺑﺲ " ﻣﺤﺒﺖ " ﮨﮯ !
ﯾﮧ ﺧﻮﺩ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ، ﯾﮧ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ !
ﯾﮧ ﺑﺲ ﺗﻮﻓﯿﻖ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ،،،،، ﻓﻘﻂ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ !!!
ﻋﻄﺎﺋﮯ " ﺭﺏَّ ﯾﮑﺘﺎ " ﮨﮯ، ﯾﮧ ﮨﺮ ﺍِﮎ ﺩِﻝ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ !
ﻣﮕﺮ۔۔۔۔۔۔۔۔ﺍﺣﺴﺎﺱ ﻣﺮﻧﮯ ﭘﺮ، ﻣﺤﺒﺖ ﻣﺮ ﺑﮭﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ !
ﺗﻢ ﺍِﺱ ﮐﻮ ﺁﺯﻣﺎﺅ ﮔﮯ؟؟؟
ﻣﺤﺒﺖ ﺁﺯﻣﺎﺅ ﮔﮯ؟؟؟؟؟؟
ﺫﺭﺍ ﺁﺋﯿﻨﮧ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﺗﻮ۔۔۔۔۔۔ !!
ﺫﺭﺍ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﭘﮩﭽﺎﻧﻮ !
ﻣﺤﺒﺖ ﺁﺯﻣﺎﺅ ﮔﮯ؟
  zeemian

(29th Sep 2018 / 01:31 PM)
عمدہ دعا
  zeemian

(29th Sep 2018 / 01:33 PM)
تیری چاہت سے گریزاں بھی رہے اور ہم نے
تیری یادوں کے بھی انبار لگاکر رکھے

_کس قدر لوٹ مچی شہر۔ نگاراں میں نہ پوچھ_
_ہاں مگر ہم نے ترے درد بچا کر رکھے_

_دل جو ٹوٹا بھی تو تقدیر کو ٹھہرایا سبب_
_آنکھ بھر آئی تو الزام گھٹا پر رکھے_

*مجید اختر*
  zeemian

(29th Sep 2018 / 01:33 PM)
ساری عمر گزر گئی. ..
کبھی مروت. ..
کبھی محبت. ..
کبھی یہاں. ..
تو. .
کبھی وہاں. ..
محبتوں کے سکے. ..
لٹائے چلے گئے. ..
جس کا بھی درد ملا. ..
اٹھائے چلے گئے. ..
جس نے پلٹ کر بھی نہیں پوچھا. ..
اس سے بھی تعلق نبھائے چلے گئے. ..
اس رستہ پہ چلتے چلتے. ..
یونہی زرا سا شوق ہوا تھا. ..
دیکھوں تو. ..
ساری عمر لٹا کر. ..
میرے حصے کیا آیا ہے. ..
میرے حصے میں بھی. ..
کیا کوئی ایک شخص بھی آیا ہے. .؟
خود کو پائی پائی کر کے. ..
کیا کوئی ایک شخص کمایا ہے. ..؟
یا. ...
خالی ہاتھوں کے حصے میں. ..
خالی ہاتھ ہی آیا ہے. ..؟
ایک گہری خاموشی تھی. ..
دل سے صرف ایک صدا آئی. ..
جس کے حصے میں کچھ نہیں ہوتا. ..

اس کے حصے میں رب آیا ہے. ..
یہ جو رب ہے ناں. ..
وہی سب ہے ناں. ..
جہاں سایہ بھی ساتھ چھوڑ دیتا ہے. ..
وہ وہیں سے پهر تعلق جوڑ دیتا ہے_______!!!

  Lee_Ming_Shu

(29th Sep 2018 / 05:14 PM)
ﺫﺭﺍ ﭨﮭﮩﺮﻭ ! .........
ﻣﺠﮭﮯ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﻧﮯ ﺩﻭ________
ﺍﺫﯾﺖ ﺳﮯ ﺑﮭﺮﮮ ﻟﻤﺤﮯ________
ﺑﭽﮭﮍﺗﮯ ﻭﻗﺖ ﮐﮯ ﻗﺼﮯ_________
ﮐﮧ ﺟﺐ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﮯ ﮐﻨﺎﺭﻭﮞ ﭘﺮ
ﻣﺤﺒﺖ ﺟﻞ ﺭﮨﯽ _________ ﮨﻮﮔﯽ !!....
ﮐﺌﯽ ﺟﻤﻠﮯ ﻟﺒﻮﮞ ﮐﯽ ﮐﭙﮑﭙﺎﮨﭧ ﺳﮯ ﮨﯽ
_______ ﭘﺘﮭﺮ ﮨﻮ ﺭﮨﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ !!........
ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻥ ﭘﺘﮭﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﻦ ﮐﺮﺗﯽ
_______ ﭼﯿﺨﺘﯽ ﮔﻮﯾﺎﺋﯽ ﮐﻮ ﻣﺤﺴﻮﺱ
ﮐﺮﻧﮯ ﺩﻭﺫﺭﺍ ﭨﮭﮩﺮﻭ !!...... ﻣﺠﮭﮯ
ﺗﻨﮩﺎﺋﯽ ﮐﻮ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﻧﮯ ﺩﻭ _________
ﺗﻤﮭﺎﺭﮮ ﺑﻌﺪ ﮐﺎ ﻣﻨﻈﺮ _________
ﺩﻝِ ﺑﺮﺑﺎﺩ ﮐﺎ ﻣﻨﻈﺮﺟﮩﺎﮞ ﭘﺮ __________
ﺁﺭﺯﻭﺅﮞ ﮐﮯ ﺟﻮﺍﮞ ﻻﺷﻮﮞ ﭘﺮﮐﻮﺋﯽ ﺭﻭ
ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮔﺍ !!..... ﺟﮩﺎﮞ ﻗﺴﻤﺖ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﯽ
ﮐﮩﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟﺟُﺪﺍﺋﯽ ﻟﮑﮫ ﺭﮨﯽ ﮨﻮﮔﯽ !!......
ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻥ ﺳﺮﺩ ﻟﻤﺤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﺴﮑﺘﮯ
ﺩﺭﺩ ﮐﯽ_________ ﮔﮩﺮﺍﺋﯽ ﮐﻮ ﻣﺤﺴﻮﺱ
ﮐﺮﻧﮯ ﺩﻭ !!...... ﺫﺭﺍ ﭨﮭﮩﺮﻭ !!.....
ﻣﺠﮭﮯ ﺗﻨﮩﺎﺋﯽ ﮐﻮ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﻧﮯ ﺩﻭ...
  zeemian

(30th Sep 2018 / 04:36 AM)
آنکھوں میں آنسوؤں کو ابھرنے نہیں دیا
مٹی میں موتیوں کو بکھرنے نہیں دیا

جس راہ پر پڑے تھے ترے پاؤں کے نشاں
اس راہ سے کسی کو گزرنے نہیں دیا

چاہا تو چاہتوں کی حدوں سے گزر گئے
نشہ محبتوں کا اترنے نہیں دیا

ہر بار ہے نیا ترے ملنے کا ذائقہ
ایسا ثمر کسی بھی شجر نے نہیں دیا

اتنے بڑے جہان میں جائے گا تو کہاں
اس اک خیال نے مجھے مرنے نہیں دیا

ساحل دکھائی دے تو رہا تھا بہت قریب
کشتی کو راستہ ہی بھنور نے نہیں دیا

جتنا سکوں ملا ہے ترے ساتھ راہ میں
اتنا سکون تو مجھے گھر نے نہیں دیا

اس نے ہنسی ہنسی میں محبت کی بات کی
میں نے عدیم اس کو مکرنے نہیں دیا
  Total: 314
Options:
Filter by author
Download Topic

In forum

New at the top

HELP - CONTACT - AGREEMENT - ABOUT US - EMAIL
LANGUAGE: EN img


© Mobopfc.com